نیا سال مبارک ہو

سماحؔ کی شاعری

(نیا سال مبارک ہو)

                                             اے دوست تجھے نیا سال مبارک ہو

                                                                                          ساتھ تجھے  نیا پیار بھی مبارک ہو

                                             ہم کو تجھ سے بھلا اور کیا چاہ ہو

                                                                                           ہم کو بس ساتھ تیرا مبارک ہو

                                             اور کچھ کہہ نہ سکے ہم تم سے

                                                                                           کہنا کیا کیا چاہتے تھے مبارک ہو

                                             رات دن کہوئے رہتے ہو تم کیا

                                                                                          خیال انہی کاخوب تمہے مبارک ہو

                                             دل کے اندر مرِِے جھانکتے ہو کیا

                                                                                          دل   مرا ، آئینہ  تیرا  مبارک  ہو

                                             لکھتے  رہتے   ہو  مسلسل   تم   کیا

                                                                                          نام  ہمارا  بھی  تمھیں  مبارک ہو       

                                             اے خدا! تجھ سے ہے دعا میری

                                                                                          مجھ کو  میرا   پیار  بڑا  مبارک  ہو

                                             شام  و  سحر  بس  یاد  میں  تیری
                                                                                          سماؔح  کو  دیوان  نیا  مبارک  ہو

 

(از:سماؔح)

(مورخہ: 18 اکتوبر 2013 رات 25: 07)

( اصل: مورخہ: 01 جنوری1996)

اچھّا لگا

boy-imagining

                   ہم کو تیرا دیکھ کریوں مسکرانا  اچھّا لگا     مسکرا کر پھر یوں روٹھ جانا اچھّا لگا

                   یاد میں پا کے وہ لب ہلانا اچھّا لگا              باتوں میں وہ اندازِ شاعرانہ اچھّا لگا

                    ہوئے ہم  جو تجھ سے ناراض تو                باتوں ،باتوں میں ہم کو منانا اچھّا لگا

                    کچھ کہتے کہتے جانے کیا وہ سوچ کر         تیرا پھر خاموش ہو ہی جانا اچھّا لگا

                   بھرم رکھتے ہوئےاپنی شانِ بے نیازی کا      نہ نہ کرتے ہوئے وہ مان جانا اچھّا لگا

جاگناہماری خاطر انکا وہ رات بھر

سماؔح کو انکا وہ دل دیوانہ اچھّا لگا

 (از:سماؔح)

(مورخہ: 12 فروری 2013 رات 02: 10)

( اصل: مورخہ: 03 نومبر 1995)