اچھّا لگا

boy-imagining

                   ہم کو تیرا دیکھ کریوں مسکرانا  اچھّا لگا     مسکرا کر پھر یوں روٹھ جانا اچھّا لگا

                   یاد میں پا کے وہ لب ہلانا اچھّا لگا              باتوں میں وہ اندازِ شاعرانہ اچھّا لگا

                    ہوئے ہم  جو تجھ سے ناراض تو                باتوں ،باتوں میں ہم کو منانا اچھّا لگا

                    کچھ کہتے کہتے جانے کیا وہ سوچ کر         تیرا پھر خاموش ہو ہی جانا اچھّا لگا

                   بھرم رکھتے ہوئےاپنی شانِ بے نیازی کا      نہ نہ کرتے ہوئے وہ مان جانا اچھّا لگا

جاگناہماری خاطر انکا وہ رات بھر

سماؔح کو انکا وہ دل دیوانہ اچھّا لگا

 (از:سماؔح)

(مورخہ: 12 فروری 2013 رات 02: 10)

( اصل: مورخہ: 03 نومبر 1995)